رمضان المبارک کی برکتیں | Ramzan ul Mubarak ki Barkatain

رمضان المبارک کی برکتیں

تحریر:فقیہہ صابر سروری قادری

انسان کی تخلیق محض عبادت کے لیے ہے جیسا کہ ارشادِ رباّنی ہے:
وَمَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَ الْاِنْسَ اِلاَّ لِیَعْبُدُوْن  (سورۃ الذاریات 56)
ترجمہ: اور میں نے انسانوں اور جنوں کو نہیں پیدا کیا مگر اس لیے کہ وہ میری عبادت کریں۔
روزہ بدنی عبادت ہے جو پہلی امتوں پر بھی فرض تھا۔ اس کی فرضیت کا اندازہ درج ذیل آیات سے لگایا جا سکتا ہے:
فَمَنْ شَھِدَ مِنْکُمُ الشَّھْرَ فَلْیَصُمْہُ  (سورۃ البقرہ۔185)
ترجمہ: پس تم میں سے جو کوئی اس مہینہ کو پا لے تو وہ اس کے روزے ضرور رکھے۔
اس آیتِ کریمہ سے واضح ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنے بندوں کو روزے رکھنے کا حکم دے رہا ہے۔
یٰٓاَیُّھَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا کُتِبَ عَلَیْکُمُ الصِّیَامُ کَمَا کُتِبَ عَلَی الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِکُمْ لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ. اَیَّامًا مَّعْدُوْدَاتٍ  (البقرہ :,184 183)
ترجمہ: اے ایمان والو! تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے تاکہ تم پرہیزگار بنو۔ یہ (روزے) چند دن کے ہیں ۔

حضرت حسن بصریؒ فرماتے ہیں: ’’جب تم اللہ تعالیٰ سے ’اے ایمان والو!‘ کا خطاب سنو تو اس کے لیے اپنے کان خالی کر دو کیونکہ یہ کسی کام کے حکم یا ممانعت کے لیے ہے۔‘‘ 

حضرت امام جعفر صادقؓ فرماتے ہیں ’’ندا (یعنی اللہ کا اپنے بندے کو پکارنے) کی لذّت سے عبادت کی مشقت اور تکلیف دور ہو جاتی ہے۔ اس میں اٰمنوا ایسے راز کی طرف اشارہ ہے جو پکارنے والے اور مخاطب کے درمیان ہے جیسے وہ کہے اے میرے شخص جو میرے باطنی رازوں سے واقف ہے اور اسے جانتا ہے‘‘۔ (غنیۃ الطالبین)

تقویٰ: 

روزے کا مقصد نہایت اعلیٰ اور اس سخت ریاضت کا پھل یہ ہے کہ مسلمان متقی بن جائے اور تمام اخلاقِ رذیلہ اور اعمالِ بد سے مکمل طور پر دستبردار ہو جائے۔ جب حلال چیزیں اپنے ربّ کے حکم سے مسلمان ترک کردیں تو وہ چیزیں جن کو ان کے ربّ نے حرام کر دیا ہے (چوری، غیبت، بددیانتی، رشوت، جھوٹ وغیرہ) کیا ان کا ارتکاب کر سکتے ہیں؟ ہرگز نہیں۔ اس مہینہ بھر کی مشقت اور مشق کا مقصد یہی ہے کہ سال کے باقی گیارہ ماہ بھی اللہ تعالیٰ سے ڈرتے رہیں اور پرہیز گار بن جائیں تاکہ روزے کا اصل مقصد پا لیں۔ اگر کوئی شخص رمضان کے روزے تمام احکام و آداب کی روشنی میں رکھ لے جو قران و حدیث میں وارد ہوئے ہیں تو واقعتا نفس کا تزکیہ شروع ہو جاتا ہے۔ پھر جب نفس میں ابھار ہوتا ہے تو آئندہ رمضان آموجود ہوتا ہے۔ متقی بننے سے اللہ کا قرب حاصل ہوتا ہے ۔کسی نے حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام سے تقویٰ کے بارے میں پوچھا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے انگلی سے دل کی طرف اشارہ فرمایا ’’تقویٰ یہاں ہوتا ہے۔ ‘‘
جتنا دل اللہ تعالیٰ کے قریب ہو گا اتنا ہی بندہ متقی ہو گا۔
حضرت جنیدؒ نے فرمایا ’’ روزہ آدھی طریقت ہے۔ ‘‘ (کشف المحجوب) 

روزہ ایک ایسی عبادت ہے جس سے انسان کے اندر نفس کا ابھار کم ہو جاتا ہے اور شہوات و لذات کی اُمنگ گھٹ جاتی ہے۔ یہ روزے چند دنوں کے ہوتے ہیں، اگر ہم ظاہری باطنی احکام پر عمل کرتے ہوئے رکھیں تو بفضلِ الٰہی متقی بن جائیں گے۔

روزے کی فضیلت

سحری: 

رمضان کا مہینہ بڑی برکتوں اور رحمتوں والا ہوتا ہے۔ اس میں روزے دار کو سحری نصیب ہوتی ہے جس کے متعلق قرآن پاک میں ارشادہے:
وَ بِالْاَسْحَارِھُمْ یَسْتَغْفِرُوْنَ  (الذاریٰت 18)
ترجمہ: اور سحری کے اوقات میں وہ معافی مانگتے ہیں۔
سحری کا وقت دل کی صفائی کے لیے بہترین اور اخلاص میں تشویش میں ڈالنے والی چیزوں سے خالی ہوتا ہے۔ حدیثِ نبویؐ ہے:
’’ اللہ تعالیٰ ہر شب جب تہائی پچھلی رات رہتی ہے تو آسمانِ دنیا پر نزول فرماتا ہے کہ کوئی ہے جو مجھ سے دعا مانگے اور میں قبول کروں اور کوئی ہے جومجھ سے مانگے اور میں دوں اور کوئی ہے جو مجھ سے مغفرت کا خواہاں ہو پس میں اس کو بخش دوں۔‘‘ 

روزہ اور صحت : 

ڈاکٹر واطبا بتاتے ہیں کہ روزہ کاصحتِ جسمانی سے خاص تعلق ہے اور رمضان میں سب خود یہ تجربہ کرتے ہیں کہ بارہ سے پندرہ گھنٹے خالی پیٹ رہ کر افطار کے وقت بیشمار نعمتیں اور لذیذ غذائیں چند منٹوں کے اندر معدہ میں پہنچ جاتی ہیں اور کوئی تکلیف بھی نہیں ہوتی۔ یہ صرف روزہ کی برکت ہے۔ اگر طبعی نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو اس میں جہاں ظاہر باطن کا تزکیہ ہوتا ہے وہاں تندرستی بھی حاصل ہو تی ہے چنانچہ حافظ مندری نے ’’الترغیب و الترہیب‘‘ میں حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کا ارشاد نقل کیا ہے:
 ’’جہاد کرو غنیمت حاصل ہو گی، روزے رکھو تندرست رہو گے، سفر کرو مالدار ہو جاؤ گے۔‘‘ (رواہ الطبرانی فی الاوسط و رواۃ  ثقات) 

روزہ گناہ سے حفاظت:

اگر روزے کو تمام احکام و آداب سے پورا کیا جائے تو بلاشبہ گناہوں سے محفوظ رہنا آسان ہوجاتا ہے۔ سنن نسائی میں ارشادِ نبوی نقل ہے:
الصوم جنۃ ما لم یخرقھا
ترجمہ: روزہ (گناہ سے روکنے والی) ڈھال ہے جب تک اس کو پھاڑ نہ ڈالے۔
ایک اور جگہ ارشاد پاک ہے:
’’ جو شخص روزہ رکھ کر جھوٹی بات اور غلط کام نہ چھوڑے تو اللہ کو کچھ حاجت نہیں کہ وہ(گناہوں کوچھوڑے بغیر) محض کھانا پینا چھوڑے۔‘‘  (بخاری عن ابی ہریرہؓ)

معلوم ہوا کہ صرف کھانا پینا اور جنسی تعلقات چھوڑنے سے ہی روزہ کامل نہیں ہوتا بلکہ روزے کو فواحش، منکرات اورہر طرح کے گناہوں سے محفوظ رکھنا لازم ہے۔ روزہ رکھنے والے کو چاہیے کہ بدکلامی نہ کرے جیسا کہ ارشاد نبوی ہے: 
’’جب تم میں کسی کا روزہ ہو تو وہ گندی باتیں نہ کرے، شور نہ مچائے۔ اگر کوئی شخص گالی گلوچ یا لڑائی جھگڑا کرنے لگے تو جواب نہ دے بلکہ یوں کہے میں روزے سے ہوں۔‘‘ (بخاری، مسلم عن ابی ہریرہؓ) 
روزہ دار کو چاہیے کہ پانچوں حواس کو قابو میں رکھے۔ (کشف المحجوب)
 حضور صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے ایک صحابیؓ سے فرمایا ’’جب تو روزے رکھے تو تیرے کان، آنکھ، ہاتھ، زبان الغرض تیرا ہر عضو روزہ دار ہونا چاہیے‘‘ نیز فرمایا ’’بہت سے روزہ دار ایسے ہوتے ہیں کہ ان کو روزہ سے بھوک پیاس کے سوا کچھ حاصل نہیں ہوتا۔‘‘ (البخاری مسلم عن ابی ہریرہؓ) 
 حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ آقاپاک صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے فرمایا:’’بہت سے ایسے روزہ دار ہیں جن کو (حرام کھانے یا حرام کام کرنے کی وجہ سے) پیاس، بھوک کے علاوہ کچھ حاصل نہیں ہوتا اور بہت سے تہجد گزار ایسے ہیں جن کے لیے (ریاکاری کی وجہ سے) جاگنے کے سوا کچھ نہیں۔

روزے کی جزا: 

روزہ دار کے لیے اللہ تعالیٰ نے بڑا اجر و ثواب رکھا ہے جیسا کہ حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہٗ سے روایت ہے کہ آقاپاک علیہ الصلوٰۃ والسلام نے فرمایا:
’’روزے دار کی خاموشی تسبیح ہے اور سونا عبادت ہے۔ اسکی دعا قبول ہوتی ہے اسکے عمل دو گنا کیے جاتے ہیں۔‘‘
ایک روزہ رکھ لینے سے خدا پاک کی طرف سے کیا انعام ملتا ہے؟ ارشادِ نبوی ہے:
جو شخص اللہ کی خوشنودی کے لیے ایک دن روزہ رکھے اللہ تعالیٰ اس کو آتشِ دوزخ سے اتنی دور کر دے گا جتنی دور کوئی شخص ستر سال چل کر پہنچے۔‘‘  ( بخاری و مسلم )
اس حدیث میں نفل یا فرض روزہ کی تخصیص نہیں کی گئی ہے۔ خاص رمضان کے روزوں کے بارے میں ارشادِ نبویؐ ہے:
’’ شرعاً جسے روزے چھوڑنے کی اجازت نہ ہو، عاجز کرنے والا مرض بھی لاحق نہ ہو اس نے اگر رمضان کا ایک روزہ چھوڑ دیا تو عمر بھر روزہ رکھنے سے بھی اس کے ایک روزہ کی تلافی نہ ہوگی اگر چہ (بطور قضا) عمر بھر روزے بھی رکھ لے ۔‘‘ (مشکوٰۃ)
بات یہ کہ ہر چیز کا ایک موسم ہوتا ہے اورموسم کے اعتبار سے اشیائے اجناس کی قیمت بڑھتی اور چڑھتی ہے۔ ماہِ رمضان المبارک فرض روزوں کے لیے مخصوص کر دیا گیا ہے۔ اگر کسی نے اپنی بدبختی سے رمضان کا ایک بھی روزہ چھوڑ دیا تو اس کے نامہ اعمال میں گناہِ کبیرہ تو لکھا ہی گیا اور روزہ رکھنے پرجو ثوابِ عظیم اور بہت بڑی خیر و برکت سے محرومی ہوئی وہ اس کے علاوہ ہے جوناقابلِ تلافی نقصان ہے۔ اس ایک روزے کے عوض اگر عمر بھر بھی روزے رکھے تب بھی وہ بات حاصل نہ ہوگی جو رمضان میں روزے رکھنے سے حاصل ہوتی ہے۔ 

روزے کا ایک خاص وصف: 

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے روزہ کے بارے میں ارشاد فرمایا ’’(روزہ کے دوران) انسان کے ہر نیک عمل کا اجر (کم از کم) دس گنا بڑھا دیا جاتا ہے‘‘ لیکن خاص روزہ کے بارے میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے ’’روزہ میرے لیے ہے اور میں ہی اس کی جزا دوں گا۔ بندہ میری وجہ سے اپنی خواہش اور کھانے پینے کو چھوڑتا ہے۔‘‘ (بخاری، مسلم عن ابی ہریرہؓ) 

روزہ رکھ کر اسے تمام آداب و احکام کے ساتھ وہی پورا کرتا ہے جو خالص اللہ تعالیٰ کی رضا کا طالب ہوتا ہے اسی لیے فرمایا الصوم لی (روزہ خاص میرے لیے ہے) ۔ پھر جس عمل میں ریا کاخدشہ بھی نہ ہو اس کا ثواب بھی ممتاز ہونا چاہیے چنانچہ خداوند کریم دوسری عبادتوں کا ثواب فرشتوں سے دلا دیتا ہے اور روزہ کا ثواب خود مرحمت فرماتا ہے۔

روزہ دار کے لیے جنت کا ایک خاص دروازہ: 

حضرت سہل سعدؓ سے روایت ہے کہ حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ارشاد فرمایا ’’جنت کے آٹھ دروازے ہیں جن میں ایک کا نام ریان ہے اس سے صرف روزہ دار ہی داخل ہوں گے۔‘‘

 ایک اور جگہ ارشاد پاک ہے ’’روزہ دار کے لیے دو خوشیاں ہیں ایک خوشی افطارکے وقت ہوتی ہے اور ایک خوشی اس وقت ہوگی جب اپنے ربّ سے ملاقات کرے گا۔‘‘

در حقیقت ربّ کی ملاقات ہی توعبادت کا مقصودِ اصلی ہے۔ اس وقت کی خوشی کا کیا کہنا جب عاجز بندے اپنے معبود سے ملاقات کریں گے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو یہ ملاقات نصیب فرمائے۔ آمین

 

33 تبصرے “رمضان المبارک کی برکتیں | Ramzan ul Mubarak ki Barkatain

  1. روزوں کے ظاہری اور باطنی فوائد کو مفصل انداز میں بیان کیا گیا ہے۔ ماشاءاللہ

  2. ربّ کی ملاقات ہی توعبادت کا مقصودِ اصلی ہے۔ اس وقت کی خوشی کا کیا کہنا جب عاجز بندے اپنے معبود سے ملاقات کریں گے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو یہ ملاقات نصیب فرمائے۔ آمین

  3. اللہ پاک ہم سب کو رمضان المبارک کے صدقے اپنا قرب عطا فرمائے اور صحیح معنوں میں روزہ کی حقیقت کو سمجنھے کی توفیق عطا فرمائے آمین

  4. روزہ کا مقصد یہ ہے کہ روزہ دار متقی بن جائے ۔دوسرے الفاظ میں روزہ اصل میں تقویٰ کا حصول ہے اور روزہ کا انعام روئیت( دیدار حق تعالٰی ) ہے جو تقوی’ کے بعد حاصل ہوتا ہے

  5. بےشک اگر روزے کو تمام احکام و آداب سے پورا کیا جائے تو بلاشبہ گناہوں سے محفوظ رہنا آسان ہوجاتا ہے۔

  6. بےشک اگر روزے کو تمام احکام و آداب سے پورا کیا جائے تو بلاشبہ گناہوں سے محفوظ رہنا آسان ہوجاتا ہے۔

  7. ماشائ اللہ
    #sultanbahoo #sultanularifeen #sultanulashiqeen #tehreekdawatefaqr #tdfblog #blog #urdublog #spirituality #sufism #faqr #ramzan2021 #ramdanmubarak
    #ramzanspecial

  8. سبحان اللہ بہت ہی اچھی تحریر ہے۔
    #sultanbahoo #sultanularifeen #sultanulashiqeen #tehreekdawatefaqr #tdfblog #blog #urdublog #spirituality #sufism #faqr #ramzan2021 #ramdanmubarak
    #ramzanspecial

  9. ماشائ اللہ
    #sultanbahoo #sultanularifeen #sultanulashiqeen #tehreekdawatefaqr #tdfblog #blog #urdublog #spirituality #sufism #faqr #ramzan2021 #ramdanmubarak
    #ramzanspecial

اپنا تبصرہ بھیجیں